مرحوم شیخ محمد عبداللہ کا 113واں یوم پیدائش، مقبرہ پر تعزیتی تقریب 

ڈاکٹر فاروق عبداللہ ،عمر عبداللہ اور دیگر زعماء نے گلباری اور فاتحہ خوانی ادا کی 
سرینگر:مرحوم شیخ محمد عبداللہ کے 113ویں یوم پیدایش پر اُن کے مقبرہ واقعہ نسیم باغ حضرت بل میں سخت سردی کے باوجود کارکنان نیشنل کانفرنس ، مختلف سیاسی ، سماجی اور دینی جماعتوں کے نمائندوں نے شرکت کی۔ مرحوم کے مرقد پر گُلباری اور فاتحہ خوانی ادا کی گئی ، جبکہ صبح 9بجے سے قرآن خوانی کی مجلس آراستہ ہوئی جس میں مختلف ایمہ مسجد، نعت خوان اور علمائے کرام نے شرکت کی۔ پارٹی کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ اور نائب صدر عمر عبداللہ نے صبح 11بجے ہی مزار قائد پر آکر فاتحہ خوانی اور گلباری انجام دی۔ اس کے بعد مرحوم کے مرقد پر اجتماعی فاتحہ خوانی ادا کی گئی، جس میں پارٹی کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ،ناب صدر عمر عبداللہ ، جنرل سکریٹری علی محمد ساگر، معاون جنرل سکریٹری ڈاکٹر شیخ مصطفےٰ کمال اور صوبائی صدر ناصر اسلم وانی ، سینئر لیڈران عبدالرحیم راتھر، چودھری محمد رمضان، شریف الدین شارق، مبارک گل، محمد اکبر لون، نذیر احمد خا 
ن گریزی، میر سیف اللہ، قیصر جمشید لون، عرفان احمد شاہ، پیر آفاق احمد، شمیمہ فردوس، سکینہ ایتو، الطاف احمد کلو، عبدالمجید لارمی، علی محمد ڈار، محمد یوسف ٹینگ، کفیل الرحمن، ڈاکٹر بشیر احمد ویری، غلام محی الدین میر، حاجی عبدلاحد ڈار، ایڈوکیٹ شوکت احمد میر، شبیر احمد میر، صبیہ قادری، جگدیش سنگھ آزاد، ایڈوکیٹ عباس ڈار، غلام نبی بٹ، حاجی غلام رسول صوفی، میر غلام رسول ناز، تنویر صادق،عمران نبی ڈار، احسان پردیسی، مدثر شہمیری کے علاوہ تمام سرکردہ لیڈران، عہدیداران، ضلع اور بلاک صدور نے فاتحہ خوانی اور گُلباری میں شرکت کی جبکہ یوتھ اور خواتین ونگ کے لیڈران بھی موجود تھے۔ اِس سے قبل مرحوم کے تاریخ ساز سیاسی، سماجی خدمات پر روشنی ڈالی گئی۔ جبکہ صبح سویرے سے ہی ریاست کی مختلف مساجد، زیارتگاہوں ، خانقاہوں میں مرحوم رہنما کے حق میں کلمات ، دعائے مغفرت اور قرآن خوانی ادا کی گئی۔ اس سے قبل پارٹی جنرل سکریٹری علی محمد ساگر اور سینئر لیڈر شریف الدین شارق نے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے شیر کشمیر شیخ محمد عبداللہ کو زبردست الفاظ میں خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے اُن کی تاریخ ساز اور ناقابل فراموش تحریک حریت کشمیر کے سلسلے میں مرحوم کی عظیم قربانیوں پر روشنی ڈالی اور کہا کہ اِن کی کوششوں کی بدولت طویل جدوجہد اور بے پناہ مشکلات کی بدولت اہل کشمیر کو شخصی راج سے نجات ملا، ۸۰ فیصدی دیہی آبادی کو زمین پر مالکانہ حقوق حاصل ہوئے، مفت تعلیم، پریس پلیٹ فارم کی آزدی ، مذہبی آزادی اور ووٹ پرچی کا حاصل ہوا۔جبکہ سود خواری ، چکداری، بے گاری اور کشمیریوں کو نجات ملی اور مرحوم کی عظیم قربانیاں تا قیامت اہل کشمیر کے دلوں میں یاد رہی گی۔ شیر کشمیر بھون جموں، پیرپنچال، چناب ، لیہہ ، کرگل اور ریاست کے دیگر صدر اور تحصیل مقامات پر مرحوم بابائے قوم شیخ محمد عبداللہ کو خراج عقیدت پیش کیا گیا۔ ادھرنیشنل کانفرنس کے جنرل سکریٹری علی محمد ساگر (ایڈوکیٹ) نے اپنے پیغام میں ریاستی عوام خصوصاً اُن تمام لوگوں بالخصوص پارٹی سے وابستہ کارکنوں کا تہیہ دل سے شکریہ ادا کیا کہ جنہوں نے سردی کے باوجود مرحوم شیخ محمد عبداللہ کے 113ویں سالگرہ پر اپنا خراج عقیدت پیش کرنے کیلئے اُن کے مرقد پر حاضری دینے کیلئے پارٹی عہدیداران اور کارکنوں خصوصاً عوام کا شکریہ ادا کیا۔ اُنہوں نے کہا ،کہ پارٹی عہدیداران اور کارکنوں نے صبح صادق مزار پر حاضری دیکر اپنا فرض انجام دیا۔ ساگر نے کہا کہ نیشنل کانفرنس ایک تحریک کا نام ہے اور ہمیشہ سے ریاست کی سالمیت ، فرقہ وارانہ اتحاد اور عوامی مفادات کو تحفظ دینے کیلئے کام کرتی آئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریاست کا عوام تا قیامت شیر کشمیر کی عظیم اور پاک قربانیاں فراموش نہیں کرسکتے ہیں۔ 

Please follow and like us:
1000

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *