0

اسمبلی انتخابات:الیکشن کمیشن اورسیاسی پارٹیاں سرگرم عمل ،حکمت عملیوں اورلائحہ عمل پر غوروخوض شروع

انتخابات کےلئے تیار موڈ میں رہیں،90سیٹوں پر توجہ مرکوزکریں
نئی دہلی میں منعقدہ میٹنگ میں مرکزی وزیرداخلہ امت شاہ کی جموں وکشمیرشاخ کے لیڈروں کو ہدایت
سری نگر:۵، جولائی:جے کے این ایس : سپریم کورٹ آف انڈیا کی ہدایت کے تحت30ستمبر2024سے پہلے جموں وکشمیرمیں اسمبلی انتخابات کرائے جانے اوراس سلسلے میں الیکشن کمیشن آف انڈیاکی جانب سے ضروری مشق اورتیاریوں میں تیز ی لائے جانے کے بیچ سیاسی جماعتوںنے اپنی اپنی حکمت عملیوں کوحتمی شکل دینے کی غرض سے اپنی سرگرمیاں تیز کردی ہیں ۔جے کے این ایس کے مطابق جمعرات کو سری نگرمیں نیشنل کانفرنس کی مجلس عاملہ کااہم اجلاس منعقد ہونے کے بعد مرکزی راجدھانی نئی دہلی میں شام کے وقت مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے بی جے پی کی جموں و کشمیر شاخ کے لیڈروں کیساتھ ایک اہم میٹنگ کی،جس میں بی جے پی کے قومی صدر جے پی نڈا، قومی جنرل سکریٹری (تنظیم) بی ایل سنتوش اوربی جے پی لیڈر دیویندر کمار منیال کے علاوہ پارٹی کے انچارج برائے امورجموں وکشمیرترون چگ اور بھاجپا جموں وکشمیر کے تمام سینئر لیڈران نے شرکت کی ۔ بی جے پی لیڈر دیویندر کمار منیال نے میٹنگ میں شرکت کے بعدنئی دہلی میں کہا کہ جموں و کشمیر ایک یونین ٹریٹری ہے اور براہ راست مرکزی وزارت داخلہ کے تحت ہے۔انہوںنے کہاکہ مرکزی وزیر داخلہ دو ماہ بعد سہ ماہی اس طرح کے اجلاس منعقد کرتے ہیں۔بی جے پی لیڈر دیویندر کمار منیال نے کہاکہ یہ ملاقات بنیادی طور پر پارلیمانی انتخابات کے بارے میں تھی جو حال ہی میں ہوئے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ ہم نے پورے الیکشن کے بارے میں تفصیلی معلومات دی۔بی جے پی لیڈر دیویندر کمار منیال نے کہاکہ بی جے پی جموں وکشمیرمیں آئندہ اسمبلی انتخابات میں تمام 90سیٹوں پر الیکشن لڑے گی۔قابل ذکر بات یہ ہے کہ جموں و کشمیر میں اس سال ستمبر میں10سال بعد اسمبلی انتخابات کا امکان ہے، کیونکہ یہاں آخری اسمبلی انتخابات سال2014میں منعقد ہوئے تھے،اور جموں وکشمیرباضابطہ طور پرایک مکمل ریاست تھی ،جس کو 5اگست2019کو پارلیمان میں منظور کی گئی بل کے بعد2مرکزی زیرانتظام علاقوں جموں وکشمیر اور لداخ میں تقسیم کیاگیا ۔ سیاسی جماعتوں کی جانب سے جموں و کشمیر میں جلدسے جلد اسمبلی انتخابات کرانے اور ریاستی درجے کی بحالی کا مطالبہ کیا جاتارہا ہے۔قابل ذکر ہے کہ سپریم کورٹ نے الیکشن کمیشن آف انڈیا اور مرکز سے30 ستمبر2024 تک جموں وکشمیرمیں اسمبلی انتخابات کرانے کو کہا تھا۔چیف الیکشن کمشنر راجیو کمار نے پہلے کہا تھا کہ جموں و کشمیر اسمبلی انتخابات لوک سبھا انتخابات کے بعد ہوں گے۔تاہم بعدازاں کمیشن نے کچھ تحفظات کے تحت یہ فیصلہ لیاکہ جموں وکشمیر لوک سبھا انتخابات کا عمل مکمل ہونے کے بعد اسمبلی انتخابات کرائے جائیں گے۔چیف الیکشن کمشنر راجیو کمار اے این آئی کے ساتھ ایک انٹرویو میںنے کہاتھاکہ ہم نے ابھی جموں و کشمیر میں اسمبلی انتخابات کرانے ہیں۔انہوں نے کہاتھاکہ میں نے پہلے پریس کانفرنس میں بتایا تھا کہ دسمبر2023 سے جموں وکشمیرمیں اسمبلی انتخابات کرانے کا راستہ کھل گیا ہے، یہ مارچ کا مہینہ ہے اور خطے میں برف باری ہوتی ہے، اس لئے اس وقت انتخابات کے انعقاد کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔راجیو کمار کاکہناتھاکہ جموں و کشمیر میں لوک سبھا انتخابات کےساتھ ریاستی اسمبلی کے انتخابات کروانے کے لیے بہت سی سکیورٹی فورسز کی ضرورت پڑے گی۔دریں اثناءجمعرات کو نئی دہلی میں امت شاہ کی زیر قیادت میٹنگ میں پارٹی کی قومی لیڈرشپ نے بھاجپا جموں وکشمیر یونٹ کے لیڈروں کو ہدایت دی کہ وہ اسمبلی انتخابات کےلئے تیار موڈ میں رہیں، تنظیمی توسیع پر توجہ دیں اور اس کی ترقی میں رکاوٹ ڈالتے ہوئے تمام مسائل کو حل کریں۔انہوںنے لیڈروں سے کہاکہ پوری مشق نتیجہ پر مبنی اور تین جہتی ہونی چاہیے۔امت شاہ نے لیڈروں سے کہاکہ وہ پچھلے دس سالوں میں تنظیم کے اچھے کام کےساتھ عوام تک پہنچیں،سرمئی علاقوں کا پتہ لگائیں اور پارلیمانی انتخابات کے دوران سامنے آنے والی پارٹی کی کمزوریوں پر کام کریں تاکہ جموں و کشمیر میں سیاسی طور پر نامعلوم علاقوں میں کمل کے کھلنے کو یقینی بنایا جا سکے۔ مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ،کی زیرصدارت میٹنگ میں بی جے پی کے صدر جے پی نڈا اور قومی جنرل سکریٹری (تنظیم) بی ایل سنتوش،انچارج جموں و کشمیر امور ترون چ ±گ، شریک انچارج آشیش سود کے علاوہ جموں و کشمیریونٹ کے صدر رویندر رینا، جنرل سکریٹریز سنیل شرما، ڈاکٹر ڈی کے منیال، وبود گپتا اور جنرل سکریٹری (تنظیم) اشوک کول، ممبران لوک سبھا ڈاکٹر جتیندر سنگھ، جگل کشور شرما ، ڈاکٹر غلام علی کھٹانہ (راجیہ سبھا ایم پی) نے قومی قیادت کو یقین دلایا کہ وہ اسمبلی انتخابات کے بعد جموں و کشمیر میں بی جے پی کی اپنی حکومت کو یقینی بنانے کے پارٹی کے مقصد کو پورا کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں