0

تنازعات کے منافع خوروں نے جموں و کشمیر کے بچوں کو برین واش کیا اور ان کے ہاتھوں میں پتھر دیے۔ ایل جی سنہا

سرینگر۔ 14؍ ستمبر۔۔ جموںو کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے جموں کشمیر کے میں بچوں کے تحفظ کے نظام اور میکانزم کو مضبوط بنانے کے لیے پنچائتی راج اداروں، پولیس اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کے نمائندوں کے لیے حساسیت/تربیتی پروگراموں کے لیے دو روزہ ورکشاپ کا افتتاح کیا۔یہ ملک میں خواتین اور بچوں کی ترقی کی وزارت، حکومت ہند کی طرف سے اس طرح کی پہلی مہم ہے۔اپنے خطاب میں، لیفٹیننٹ گورنر نے خواتین اور بچوں کی ترقی کی وزارت کا شکریہ ادا کیا اور سماجی بہبود کے محکمے کو اس کے اختراعی اقدام کے لیے سراہا جس کا مقصد 2023-24 میں 15,000 افراد کے لیے تربیتی پروگرام کا انعقاد کرنا ہے۔انہوں نے کہا کہ تربیتی پروگرام جموںو کشمیر انتظامیہ کے ایک خوشگوار بچپن کو محفوظ بنانے اور بچوں کے لیے ایک معاون ماحولیاتی نظام کو یقینی بنانے کے عزم کا ثبوت ہے جو انہیں اپنی حقیقی صلاحیتوں کا ادراک کرنے کے قابل بناتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کئی دہائیوں سے، ہمارے بچوں کو وہ بچپن نہیں ملا جس کے وہ حقدار تھے۔ تنازعات کے منافع خوروں نے ان کی برین واشنگ کی اور ان کے ہاتھوں میں پتھر دے دیئے۔ ہم نے اس ماحولیاتی نظام کو ختم کر دیا ہے اور ہمارے بچے اب لیپ ٹاپ، ٹیب لے کر قوم کی تعمیر میں اپنا حصہ ڈال رہے ہیں۔افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے، لیفٹیننٹ گورنر نے ادارہ جاتی دیکھ بھال اور گلیوں کی صورت حال میں رہنے والے بچوں کو گھر فراہم کرنے کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔لیفٹیننٹ گورنر نے کہا، “میرا خیال ہے کہ بچپن گھر کے متحرک ماحول میں کھلتا ہے، اس لیے ادارہ جاتی دیکھ بھال آخری آپشن ہونا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ حکومت نے بحالی اور بچوں کی دیکھ بھال کے کئی اقدامات کیے ہیں، اور سنٹرل ایڈاپشن ریسورس اتھارٹی اور اسٹیٹ ایڈاپشن ریسورس ایجنسی کی مشترکہ کوششوں کے ذریعے گود لینا شروع کیا گیا ہے جس سے بچوں کی خاندان پر مبنی غیر ادارہ جاتی دیکھ بھال کو فروغ ملے گا۔لیفٹیننٹ گورنر نے عوامی نمائندوں، این جی اوز، کمیونٹی عمائدین، مذہبی رہنماؤں اور یوتھ کلبوں سے بھی منشیات کی لعنت کے خلاف جنگ میں شامل ہونے کی اپیل کی۔نوعمروں میں منشیات کا استعمال تشویش کے بڑے شعبوں میں سے ایک ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے منشیات کے خلاف زیرو ٹالرنس کی پالیسی اپنائی ہے اور یہ ہماری اجتماعی ذمہ داری ہے کہ ہم بیداری پیدا کریں اور منشیات سے پاک جموں و کشمیر کے وژن کو عملی جامہ پہنانے کے لیے کارروائی کو مضبوط کریں۔اس موقع پر لیفٹیننٹ گورنر نے مرکزی حکومت کے افسران سے کہا کہ وہ جموں اور سری نگر میں ایک ایک واتسلیہ سدن کے قیام پر غور کریں۔ اس موقع پرڈاکٹر ارون کمار مہتا، چیف سکریٹری جموں و کشمیر؛ سنجیو کمار چڈھا، ایڈیشنل سکریٹری، خواتین اور بچوں کی ترقی کی وزارت؛ محترمہ اندرا مالو، جوائنٹ سکریٹری، خواتین اور بچوں کی ترقی کی وزارت محترمہ شیتل نندا، کمشنر سکریٹری سماجی بہبود محکمہ اور مرکزی حکومت اور یو ٹی انتظامیہ کے سینئر افسران بھی موجود تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں