0

جموں اسمارٹ سٹی نے اپنے ای رکشا، ای آٹو پروجیکٹ کے لیے ایوارڈ حاصل کیا

جموں 28 ستمبر ۔ ایم این این۔ جموں سمارٹ سٹی کو اس کے ای-موبلٹی پروجیکٹ کے لیے ایوارڈ ملا ہے، جس میں ای آٹوز اور ای رکشا کے کامیاب آپریشنز شامل ہیں۔ یہ ایوارڈ اسے اندور میں منعقدہ اسمارٹ سٹیز ایوارڈ مقابلہ 2022 کے تحت ایوارڈ کی تقریب میں دیا گیا ۔انڈیا اسمارٹ سٹیز ایوارڈ مقابلہ مرکزی وزارت ہاؤسنگ اور شہری امور کے اسمارٹ سٹیز مشن کے تحت منعقد کیا جاتا ہے۔ یہ 100 سمارٹ شہروں میں پائیدار ترقی کو فروغ دینے والے شہروں، منصوبوں اور اختراعی آئیڈیاز کو پہچانتا اور انعام دیتا ہے۔ ایک اہلکار نے بتایا کہ شہری ماحولیات پروجیکٹ کے زمرے کے تحت جموں اسمارٹ سٹی نے تیسرا مقام حاصل کیا جبکہ اس زمرے میں پہلی پوزیشن اندور اور شیموگا (کرناٹک) نے دوسرے نمبر پر حاصل کی۔انہوں نے مزید کہا کہ جموں اسمارٹ سٹی 48 شہروں کی طرف سے پیش کی گئی 75 تجاویز میں سے انڈیا اسمارٹ سٹیز ایوارڈز مقابلہ کے زمرے میں فاتح بن کر ابھرا۔اطلاعات کے مطابق، جموں سمارٹ سٹی لمیٹڈ (جے ایس سی ایل) کے چیف ایگزیکٹو آفیسر (سی ای او) راہل یادو نے مرکزی وزیر برائے ہاؤسنگ اور شہری ترقی ہردیپ سنگھ پوری سے ایوارڈ وصول کیا۔ عہدیدار نے ایوارڈ کو “تاریخی کارنامہ” قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ ایوارڈ جموں سمارٹ سٹی لمیٹڈ کی شہری نقل و حرکت میں جدت لانے اور ملک بھر میں ایک سرسبز، زیادہ پائیدار شہری منظر نامے میں حصہ ڈالنے کے غیر متزلزل عزم کے ثبوت کے طور پر آتا ہے۔اہلکار نے بتایا کہ ای-موبلٹی پروجیکٹ جموں کے “متحرک شہر” میں ٹریفک کی بھیڑ، آلودگی اور نقل و حمل کے محدود اختیارات سمیت اہم شہری چیلنجوں سے نمٹتا ہے۔ ای۔ آٹو اور ای۔ رکشا مثبت ماحولیاتی اثرات کے ساتھ اخراج سے پاک نقل و حمل ہیں۔ یہ الیکٹرک گاڑیاں اپنی لاگت سے موثر آپریشنل حرکیات کے لیے نمایاں ہیں، جو انہیں مسافروں اور ڈرائیوروں دونوں کے لیے ترجیحی انتخاب بناتی ہیں۔”قبل ازیں صدر مرمو نے کہا کہ ہماری آبادی کا 50 فیصد سے زیادہ 2047 تک شہری علاقوں میں رہ رہے ہوں گے اور اس وقت تک جی ڈی پی میں شہروں کا کل حصہ 80 فیصد سے زیادہ ہو جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں