0

جموں و کشمیر ایگری اسٹارٹ اپ ہب کے طور پر ابھر رہا ہے۔ ڈاکٹر جتیندر سنگھ

نئی دلی۔ 28؍جنوری۔ ایم این این۔مرکزی وزیر مملکت (آزادانہ چارج) سائنس اور ٹیکنالوجی ڈاکٹرجتیندر سنگھ نے کہا کہ جموں و کشمیر زرعی اسٹارٹ اپ ہب کے طور پر ابھر رہا ہے۔ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہا کہ کرتویہ پتھ میں ان کا یوم جمہوریہ ٹیبلو جس میں بھدرواہ کے لیوینڈر فارموں کی تصویر کشی کی گئی ہے اس بات کا ثبوت ہے کہ جموں و کشمیر کو قومی سطح پر “پرپل ریوولوشن” کی جائے پیدائش کے طور پر سراہا جا رہا ہے جس کی نقل اب دیگر ہمالیائی ریاستوں جیسے اتراکھنڈ اور ہماچل پردیش،اورناگالینڈ میں بھی کی جا رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ اس ایگری اسٹارٹ اپ ہب کی بنیاد جموں و کشمیر کے ضلع ڈوڈا کے خوبصورت بھدرواہ قصبے میں رکھی گئی ہے، جہاں لیوینڈر کی کاشت بڑے پیمانے پر کی گئی ہے۔انہوں نے یاد کیا کہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے اپنے “من کی بات” نشریات میں ضلع ڈوڈہ، جموں و کشمیر سے کھیتی کی کامیابی کی اس کہانی کو تفصیل سے بیان کیا تھا اور سامعین کو بھدرواہ کے چھوٹے سے قصبے کے بارے میں بتایا تھا جہاں یہ تجربہ خوشبو مشن کے طور پر کیا گیا تھا۔ڈاکٹر سنگھ نے کہا کہ یہ کوشش ہندوستان کو اپنی معیشت کو آگے بڑھانے کے لیے ایک متبادل ذریعہ فراہم کرتی ہے۔بھدرواہ کے 3,000 سے زیادہ پھلتے پھولتے لیوینڈر کاروباریوں نے ہندوستان کے نوجوانوں کو زراعت کے ذریعہ اسٹارٹ اپ کا ایک نیا اور منافع بخش راستہ دکھایا ہے جو اس ملک کا ایک خصوصی ڈومین ہے اور یہ ہندوستان کی مستقبل کی اقتصادی ترقی اور وزیر اعظم مودی کے سال 2047 تک”وکست بھارت” کے ویژن کو عملی جامہ پہنانے میں اہم کردار ادا کرے گا۔آج ہیرا نگر، کٹھوعہ میں سی ایس آئی آر انڈین انسٹی ٹیوٹ آف انٹیگریٹیو میڈیسن کے زیر اہتمام ایک کسان سمیلن سے خطاب کرتے ہوئے، مرکزی وزیر نے یوم جمہوریہ کے موقع پر قومی راجدھانی میں کرتویہ پتھ پر ایک جھانکی کے ذریعے بھدرواہ کے لیوینڈر فارموں کی حالیہ تصویر کشی پر مسرت کا اظہار کیا۔ اسے ایک کامیابی کی کہانی کے طور پر شمار کرتے ہوئے، ڈاکٹر سنگھ نے کہا کہ خوشبو مشن سے متاثر ہوکر، ہماچل پردیش، اتراکھنڈ اور ناگالینڈ کی ریاستوں نے اب لیوینڈر کی کاشت شروع کردی ہے۔وزیر موصوف نے بتایا کہ جموں و کشمیر کے تین ہزار سے زیادہ نوجوان اس مشن میں مصروف ہیں جو خود روزگار کے ایک راستے کے طور پر ابھرا ہے کیونکہ یہ نوجوان لاکھوں میں کما رہے ہیں۔ڈاکٹر سنگھ نے اس بات پر زور دیا کہ یہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی ذاتی کوششوں اور حکومت کے ہر ممکن تعاون فراہم کرنے کے اقدامات کی وجہ سے حاصل ہوا ہے، چاہے وہ نوجوانوں کو تربیت فراہم کرنا ہو یا لیوینڈر مصنوعات کے لیے صنعت کے روابط کو یقینی بنانا ہو یا دیگر ضروری سامان کی فراہمی۔لیوینڈر سے بنی مصنوعات مہاراشٹر جیسی ریاستوں میں ہزاروں کی تعداد میں فروخت ہوتی ہیں، جس سے پروڈیوسروں کو بھرپور آمدنی ہوتی ہے۔وزیر موصوف نے یاد دلایا کہ یہ وزیر اعظم مودی ہی تھے جنہوں نے تاریخی لال قلعہ کی فصیل سے اسٹارٹ اپ انڈیا، اسٹینڈ اپ انڈیا کا نعرہ دیا تھا۔ وزیر اعظم کی کال کے بعد لوگ تحریک میں شامل ہو گئے۔ اس کے نتیجے میں، اسٹارٹ اپس کی تعداد اس وقت موجود صرف 350 سے بڑھ کر اب 1.25 لاکھ سے تجاوز کر گئی ہے، اس طرح ہندوستان اس میدان میں دنیا میں تیسرے نمبر پر ہے۔مرکزی وزیر نے نوجوانوں پر زور دیا کہ وہ زرعی اسٹارٹ اپ ایکو سسٹم میں شامل ہوں تاکہ وہ معیشت میں قدر میں اضافہ کرنے میں اپنا حصہ ڈال سکیں اور امرت کال کے اگلے 25 سالوں میں ہندوستان کو ایک نمبر کی معیشت بنانے کے قومی ہدف کو حاصل کرنے میں مدد کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں