0

سردار پٹیل مرد آہن دور اندیش سیاست دان تھے جموں وکشمیرکامسئلہ انہیں سونپ دیاگیا ہوتا 370لاگوکرنے کی ضرورت نہ پڑتی /راجناتھ سنگھ

سرینگر/31/اکتوبر/اے پی آئی سابق نائب وزیر اعظم وزیرداخلہ کومرد آہن قرار دیتے ہوئے وزیردفاع نے کہاجس طرح جوناگڑھ حیدرآباد کی ریاستوں کو انہوں نے ملک میں مدغم کیاتھا اگر جموں و کشمیر کامعاملہ بھی ان پرچھوڑدیاجاتا 370-35Aلا گو کرنے کی نوبت ہی نہیں آتی۔سابق نائب وزیراعظم کوان کے جنم دن کے موقعے پریادکرنے کا سب سے بہترین طریقہ ہے کہ یک جہتی امن ترقی اور خوشحالی کے لئے متحد ہوجائے۔اے پی آ ئی نیوز کے مطابق قومی یکجہتی دن کے موقعے پر منعقد کی گئی تقریب پر تقریر کرتے ہوئے وزیردفاع راجناتھ سنگھ نے سردار پٹیل کو مردآہن قرار دیتے ہوئے کہا ان کی صلاحیتوں اور ہمت کے باعث کئی ریاستوں اور راجواروں کو ملک میں مدغم کیاگیا۔انہوں نے کہاکہ انگریزوں سے چھٹکارا ملنے کے بعد ملک کو یک جٹ کرنا سب سے بڑا مسئلہ تھا اور اس وقت ملک کے نائب وزیراعظم وزیرداخلہ سردار پٹیل نے اپنی صلاحیتوں اور ہمت سوجھ بوجھ کا بھر پور مظاہراہ کرکے پانچ سو کے قریب راجواڑوں کو ملک میں مدغم کیااور ایسے رجواڑے خود مختارکی حیثیت سے رہناچاہتے تھے تاہم سردارپٹیل نے ان راجواڑوں کو بھارت میں مدغم کرنے کے لئے اقدامات اٹھائیں اس کام کے لئے ملک ان کااحسان مندہے۔ انہوں کہا سابق نائب وزیراعظم کے بدولت جوناگڑھ اورحیدر آباد کی ریاستیں بھارت میں مدغم ہوئی تواگرانہوں نے اپنی خدمات انجام نہ دی ہوتی توآج ملک کے عوام حیدرآبا داور جوناگڑھ جانے کے لئے پاسپورٹ حاصل کرنا پڑتا۔ وزیردفا ع نے سابق نائب وزیراعظم کو مرد آہن اور دوراندیش سیاستدان قرا ردیتے ہوئے کہاکہ 1947میں اگرجب مہاراجہ نے بھارت کے ساتھ اپنی وابستگی کااظہار کر کے معاہدے پردستخط کئے جموں و کشمیرکا معاملہ انہیں سردار پٹیل کو سونپ دیاگیاہوتا تو جموں و کشمیر کے لئے 370-35Aلاگونہ کیاجاتا۔انہوں نے کہاکہ سردار پٹیل کے جنم دن کے موقعے پرانہیں یاد کرنایاانہیں خراج عقیدت اداکرنے کا بہترطریقہ یہی ہوگاکہ ہم ملک میں یکجہتی امن ترقی اور خوشحال کے لئے متحدہوجائیں۔انہوں نے کہاکہ نظریات اور خیالات کااختلاف جمہوریت کے لئے لازمی ہوا کرتاہے تاہم ملک کی یکجہتی ہرایک پارٹی کے لئے اولین ترجیح ہونی چاہئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں