0

سری نگر میں دسہرہ کی تقریبات کی تیاریاں زوروں پر

سرینگر۔ 23؍ اکتوبر۔ ایم این این۔ پیر کو یہاں دسہرہ کی تقریبات کے انتظامات کو حتمی شکل دی جا رہی تھی جب راون کے پتلے وادی میں پہنچ گئے۔ منگل کو شیر کشمیر کرکٹ سٹیڈیم میں ‘راون دہن’ کے لیے انہیں نذر آتش کیا جائے گا جو برائی پر اچھائی کی فتح ہو کی علامت ہے۔ایک منتظم سنجے ٹکو نے ملاپ نیوز نیٹ ورک کوبتایا”ہم کل (منگل)ہونے والے دسہرہ کی تیاریاں کر رہے ہیں۔ آج صبح جموں سے راون کے پتلے آئے ہیں۔ ہم انہیں جمع کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا، “اس سال، ایک پتلے کی اونچائی 40 فٹ ہے اور باقی دو کی اونچائی 30 فٹ ہے۔ انہیں کل غروب آفتاب کے بعد نذر آتش کیا جائے گا۔ٹکو نے کہا کہ وادی میں عسکریت پسندی کے پھوٹ پڑنے کے بعد اس تہوار کو روک دیا گیا تھا، یہاں کی کشمیری پنڈت برادری 2007 سے اسے منا رہی ہے۔”لوگ اس (راون دہن( کا مشاہدہ کرنے آتے ہیں۔ یہ ایک ملی جلی بھیڑ ہے جس میں ہندو، سکھ اور مسلمان شامل ہیں۔ تقریب میں مسلمان بھی بڑھ چڑھ کر حصہ لیتے ہیں۔ تہوار اچھے طریقے سے منایا جاتا ہے۔ یہ پتلے مسلمانوں نے بنائے ہیں اور پھر جموں کے راستے ہم تک پہنچتے ہیں۔ شہر میں دسہرہ کی تیاریوں میں مصروف اتر پردیش کے رہائشی کرن ویر سنگھ نے بتایا کہ راون دہن کے لیے مواد میرٹھ سے منگوایا گیا تھا اور جموں میں تیار کیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ یہ منگل کی شام تک جمع ہو جائے گا۔ایک مقامی پنڈت نانا جی نے کہا کہ کمیونٹی “جموں و کشمیر میں حقیقی معنوں میں” برائی پر اچھائی کی جیت چاہتی ہے۔”لوگ یہاں جمع ہوں گے۔ بہت سے لوگ جموں سے آئے ہیں، اور راون کو جلایا جائے گا۔ ہم کشمیر میں بھی برائی پر اچھائی کی جیت چاہتے ہیں، اور دعا کرتے ہیں کہ امن قائم ہو۔”

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں