0

شیر کشمیر یونیورسٹی آف ایگری کلچر سائنسز اینڈ ٹیکنالوجیSKUASTجموں کے25ویں یوم تاسیس کی تقریب

زراعت معیشت کےلئے سب سے اہم اور حساس شعبہ
راعت اور متعلقہ شعبوں میں قابل عمل اور پائیدار اختراعی ماحولیاتی نظام کوبہتربنانے پر توجہ مرکوز :لیفٹنٹ گورنر منوج سنہا
سری نگر:۰۲، ستمبر: جے کے این ایس : جموں وکشمیر کے لیفٹنٹ گورنر منوج سنہا نے بدھ کے روز شیر کشمیر یونیورسٹی آف ایگری کلچر سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی(SKUAST)جموں کے25ویں یوم تاسیس کی تقریب سے پہلے خطاب کیا۔مذکورہ زرعی یونیورسٹی کو3 سال قبل زراعت اور متعلقہ شعبوں میں جدید افرادی قوت کی ضروریات کو پورا کرنے، انٹرپرینیورشپ پر مبنی تحقیق میں تعاون کرنے اور مضبوط بین ڈسپلنری ایکو سسٹم تیار کرنے کےلئے نئے سرے سے تشکیل دیا گیا تھا۔جے کے این ایس کے مطابق لیفٹنٹ گورنر منوج سنہا نے اپنے خطاب میں کہاکہ شیر کشمیر یونیورسٹی آف ایگری کلچر سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی جموں نے کئی سنگ میل حاصل کیے ہیں۔ 3نئی فیکلٹیز کے ساتھ، اس نے زراعت میں تیز ساختی تبدیلیوں کے لیے جدید ترین ٹیکنالوجیز، مہارتوں اور تحقیق کے درمیان ہم آہنگی پیدا کرنے کےلئے زراعت اور متعلقہ شعبوں میں قابل عمل اور پائیدار اختراعی ماحولیاتی نظام کو ڈیزائن کرنے پر توجہ مرکوز کی ہے۔انہوںنے کہاکہ زراعت معیشت کےلئے سب سے اہم اور حساس شعبہ ہے اور انسانیت کی بقا کےلئے ناگزیر ہے۔لیفٹنٹ گورنر منوج سنہا نے ساتھ ہی کہاکہ دنیا بھر میں متنوع چیلنجوں کی وجہ سے لوگوں کی زندگیوں پر پڑنے والے اثرات سے نمٹنے کے لئے، زرعی یونیورسٹیوں کو عالمی اعصابی نظام سے مربوط ہونا چاہیے تاکہ جدید ترین علم کو تیزی سے اپنایا جا سکے۔انہوںنے کہاکہ ہولیسٹک ایگریکلچر ڈیولپمنٹ پروگرام (HADP) نے علم حاصل کرنے اور لاگو کرنے کے لئے کاشتکاری، زراعت کی جدت طرازی میں ثقافتی تبدیلی لائی ہے اور اس نے نئے اسٹارٹ اپس کے لیے مکمل ایگری بزنس انکیوبیشن سنٹر قائم کرنے کے لیے تبدیلی کے ایجنٹوں کے درمیان مشغولیت کی حوصلہ افزائی کی ہے۔لیفٹنٹ گورنر منوج سنہا کاکہناتھاکہ (SKUAST)جموںکے علمی تحقیقی سرمائے کو HADP کے تحت لاگو کیے جانے والے29 منصوبوں کو مزید تقویت دینے کے لیے استعمال کیا جانا چاہیے، تاکہ خوراک کی حفاظت، غذائیت اور قدرتی وسائل کے پائیدار انتظام کو یقینی بنانے کے لئے کل کے مسائل کو حل کرنے کے لیے آلات کے حصول کے لیے میکانزم تیار کیا جا سکے۔منوج سنہا نے مزید کہاکہ جی20نئی دہلی کے رہنماو ¿ں کے اعلامیہ میں واضح کیا گیا ہے کہ موسمیاتی لچکدار فصلیں، تیز رفتار اختراعات اور پیداواری صلاحیت بڑھانے کے لیے سرمایہ کاری، فضلہ کو کم کرنا خوراک کی حفاظت اور کسانوں کی زندگیوں میں تبدیلی لانے کے لیے اولین ترجیح ہوگی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں