0

عالمی کرکٹ کپ شروع ہونے کے ساتھ ہی سٹے بازبھی سرگرم

پوری دنیا کے ساتھ ساتھ وادی کشمیر میں بھی آن لائن سٹی بازی جاری ،لوگوں کو لگا اب تک لاکھوں کا چونا

سرینگر22اکتوبر;وی او آئی;عالمی کرکٹ کپ شروع ہونے کے ساتھ ہی پوری دنیا کی طرف جموں کشمیر با الخصوص وادی کشمیر میں آن لائن سٹے بازی کا سلسلہ شروع ہوچکا ہے ۔ لوگ خاص کر نوجوان آن لائن سٹے بازی میں حصہ لیکر کسی ایک کھلاڑی یا کسی ملک کی ٹیم کو چن کر اس پر پیسے لگاتے ہیں اور کرکٹ میچ کے اختتام پر سٹے پر رقم لگانے والے یا تو بازی ہار جاتے ہیں یا پھر جیت لیتے ہیں ۔ وادی کشمیر کے نوجوان موبائل فونوں کے ذریعے اس سٹے بازی میں حصہ لیتے ہیں اور ایک اندازے کے مطابق ہر میچ پر یہاں کے نوجوان لاکھوں روپے داءو پر لگاتے ہیں اور ان میں سے اکثر کو نقصان کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔ آن لائن سٹے بازی پر اگرچہ قانونی پابندی ہے تاہم آن لائن ہونے کی وجہ سے اس پر قابو پانا محال ہے ۔ اس سلسلے میں کئی لوگوں نے بتایا ہے کہ وادی کشمیر کے نوجوان بھی اب آن لائن گیمنگ پر بھاری رقم داءو پر لگاتے ہیں اور آج تک اس طرح کے کئی واقعات مشاہدے میں آئے ہیں جن میں ان باتوں کا انکشاف ہوا تھا کہ نوجوانوں نے اپنے والدین کے موبائل سے لنک بینک کھاتو ں سے پیسے نکال کر آن لائن گیمنگ یا سٹے بازی پر لگائے کر لاکھوں روپے کا چونا لگنے کے شکار ہوچکے ہیں ۔ عالمی کرکٹ کپ پر نوجوان چھوٹی رقم بھی لگاتے ہیں یعنی ڈریم الیون ،مائی سرکل جیسی اپلیکشنز میں 20روپے ، 30،49روپے سے 25ہزار روپے تک لگائے جاسکتے ہیں اور صرف ایک شمولیت یعنی کنٹسٹ میں ایک کروڑ 72لاکھ 46ہزار 335افراد تک پیسے لگاتے ہیں ۔ جو جس قدر زیادہ رقم داءو پر لگاتا ہے اس کو بعد میں جیتنے کی صورت میں اسی حساب سے رقم حاصل کرسکتا ہے ۔ کئی لوگ اگرچہ اس سٹے بازی سے بڑی رقم جیت لیتے ہیں تاہم اکثر نوجوانوں کو چونا لگ جاتا ہے اس لئے والدین کو چاہئے کہ وہ اپنے بچوں کو اس سٹے بازی پر آن لائن رقم لگانے سے دور رکھیں کیوں کہ آن لائن سٹے بازی پر رقم لگانے والے جلدہی کنگال بن جاتے ہیں ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں