0

قبضہ پہلگام اور پہلگام کے نصف درجن دیہات میں بجلی کی آنکھ مچولی سے لوگوں کو مشکلات

محکمہ کی طرف سے عجیب وغریب کٹوتی شیدول پر عملدرآمد کرنے پر صارفین میں غم و غصہ کی لہر

سرینگر;08اکتوبر;وی اوآئی;جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ کے قصبہ پہلگام اور پہلگام کے نصف درجن دیہات میں میں بجلی کی آنکھ مچولی سے صارفین کو سخت مشکلات کاسامنا کرنا پڑ رہا ہے جس کے نتیجے میں صارفین میں محکمہ پی ڈی ڈی کے خلاف سخت غم و غصہ کی لہر پائی جا رہی ہے ۔ وائس آف انڈیا کے نمائندے امان ملک کے مطابق پہلگام کے متعدد علاقوں میں پچھلے ایک ہفتے سے محکمہ پی ڈی ڈی نے عجیب وغریب کٹوتی شیدول پر عملدرآمد شروع کیا ہے شام کے وقت اچانک اور غیر متوقع طور پر برقی رو منقطع کی جاتی ہے جس کے نتےجے میں صارفین کو شدید ترین مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ مذکورہ علاقوں کے لوگوں کے مطابق محکمہ پی ڈی ڈی نے خفیہ طور شیڈول مرتب کیا ہے اور اس شیڈول کو ایک منصوبہ بند سازش کے تحت منظر عام پر نہیں لایا جارہا ہے تاکہ انتظامیہ کے خلاف لوگ مشتعل نہ ہوجائیں ۔ نمائندے کے مطابق علاقوں کے لوگوں نے بتایا کہ محکمہ پی ڈی ڈی اپنی ناکامیوں کو چھپانے کیلئے صارفین کو پریشانیوں میں مبتلا کر رہا ہے ۔ انہوں نے کہا پچھلے ایک ہفتے سے ایک ایسے شیڈول پر عملدرآمد کیا جارہا ہے جس کے کسی بھی صورت مین مثبت نتاءج برآمد نہیں ہوسکتے ہیں ۔ شام چھ بجے کے بعد اچانک بجلی منقطع کی جاتی ہے جسے علاقوں کے لوگوں کو سنگین مشکلات کا سامنا کرنا پر رہا ہے ۔ نمائندے کے مطابق صارفین کے مطابق انہیں یہ سمجھ میں ہی نہیں آرہا ہے کہ محکمہ پی ڈی ڈی کس شیڈول پر عمل کر رہا ہے اور محکمہ بجلی منقطع کرکے کیا ثابت کرنا چاہتا ہے ۔ نمائندے کے مطابق مقامی لوگوں کا کہنا تھا کہ ایک طرف سے ان علاقوں میں بجلی کی آنکھ مچولی سے لوگوں کو مشکلات کا سامنا ہے اور دوسری طرف مہینہ ختم ہونے سے پہلے ہی بجلی فیس کی بلیں ارسال کی جاتی ہے جو صارفین کے لئے باعث تشوش ہے ۔ مقامی لوگوں نے محکمہ اور ضلع انتظامیہ کو خبر دار کیا ہے کہ اگر اس صورتحال پر قابو نہیں کیا گیا اور علاقوں میں بجلی کی سپلائی بحال کرنے کےلئے اقدامات نہیں کئے گئے تو لوگ سڑکوں پر نکل کر احتجاجی مظاہرئے کرنے پر مجبور ہو جائے گئے جس کی تمام تر ذمہ داری محکمہ پر عائد ہو گی ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں