0

ماسوائے لکڑی جنگلاتی پیداوار پر اب یکسر مقامی آبادیوں کا حق

سرینگر; اکتوبر; ٹی ای این; ’’حکومت جموں و کشمیر کی طرف سے دسمبر 2022 میں شروع کی گئی نان ٹمبر فاریسٹ پروڈیوس پالیسی نے جنگلات میں اور اس کے آس پاس رہنے والے گھرانوں کی بڑی تعداد کو فائدہ پہنچانا شروع کر دیا ہے‘‘ ۔ ان خیالات کا اظہارپرنسپل چیف کنزرویٹر آف فاریسٹ (پی سی سی ایف اور ایچ او ایف ایف)روشن جگی (آئی ایف ایس) نے بانڈی پورہ میں منعقدہ ایک تقریب کے دوران کہی ۔ انہوں نے کہا کہ اختراعی پالیسی نے جنگلات سے مختلف قیمتی جڑی بوٹیاں ،جھاڑیوں کو اکٹھا کرنے کے لیے ادارہ جاتی فریم ورک کو تبدیل کر دیا ۔ این ٹی ایف پی کی وصولی اور فروخت کے حقوق اب مقامی لوگوں کے سپرد کر دیے گئے ہیں ، جو جمع شدہ پیداوار کو ان خریداروں کو فروخت کرنے کے لیے آزاد ہیں جو انہیں اجارہ داری کی طرز پر کسی خاص ٹھیکیدار کو فروخت کرنے کے بجائے بہتر نرخوں کی پیشکش کرتے ہیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ رائلٹی کی ایک چھوٹی سی رقم بائیو ڈائیورسٹی مینجمنٹ کمیٹیوں کو بھی جاتی ہے، جو ان فنڈز کو گرام پنچایت کی سطح پر جنگلات کی ترقی اور حیاتیاتی تنوع کے تحفظ کے لیے استعمال کرتی ہیں ۔ روشن جگی گریز، تلیل اور دیگر علاقوں کے اپنے دو روزہ دورے کے بعد میڈیا سے بات چیت کر رہے تھے ۔ انہوں نے بانڈی پورہ فاریسٹ ڈویڑن کے مختلف جنگلاتی ترقیاتی اور بنیادی ڈھانچے سے متعلق کاموں کا جائزہ لیا ۔ کنزلون میں انہوں نے راستے کی سہولیات کے ساتھ ایک پبلک پارک کا افتتاح کیا جسے محکمہ جنگلات نے ;78728067; کی مدد سے کشن گنگا ہائیڈرو پروجیکٹ سے مک بر ڈمپنگ ساءٹ تیار کرکے تعمیر کیا ہے ۔ ترقی یافتہ ساءٹ سیاحوں ;223; مسافروں کو آرام گاہوں ، بچوں کے پارک وغیرہ کی بنیادی سہولیات فراہم کرتی ہے ۔ پی سی سی ایف، جس کے ساتھ علاقائی اے پی سی سی ایف کشمیر ریجن اور فاریسٹ اور این ایچ پی سی کے دیگر سینئر افسران تھے، نے بھی داور سے پتلون سر تک 4 کلومیٹر کے ٹریک کا راستہ کھولا جس سے اس علاقے میں ماحولیاتی سیاحت سے متعلق سرگرمیوں کو فروغ دینے میں مدد ملے گی ۔ محکمہ جنگلات نے پچھلے چند سالوں میں 65 سے زیادہ ٹریک روٹس تیار کیے ہیں جو جنگل کے دلکش مناظر سے گزرتے ہیں ، جو طلباء ، فطرت سے محبت کرنے والوں اور ٹریکروں کو اپنے قدیم بیابان میں فطرت سے لطف اندوز ہونے کے مواقع فراہم کرتے ہیں ۔ محکمہ جنگلات ماحولیاتی سیاحوں کو ایسے بہت سے مقامات پر رہائشی رہائش اور دیگر سہولیات فراہم کرتا ہے جن سے آن لائن بکنگ حاصل کی جا سکتی ہے ۔ اس مالی سال کے چھ مہینوں کے دوران 5;46;90 لاکھ افراد مختلف فاریسٹ ڈویڑنوں سے گزرنے والے ٹریکنگ راستوں کی ان سہولتوں سے لطف اندوز ہوئے ہیں ۔ سرکاری ترجمان نے کہا کہ اس طرح کے اقدامات سے دیہی دور دراز علاقوں میں نئی راہیں سامنے آ رہی ہیں ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں