0

مرکزی کابینہ کسانوں کیلئے اہم رعایتی اعلان ربیع سیزن 2023-24 کے لیے کھاد سبسڈی کو منظوری

سرینگر//25اکتوبر/ ٹی ای این / مرکزی کابینہ نے بدھ کے روز نائٹروجن، فاسفورس، پوٹاشیم کھاد کے لیے یکم اکتوبر 2023 سے 30 مارچ 2024 تک ربیع کے موسم کے لیے غذائیت پر مبنی سبسڈی (NBS) کی شرحوں کو منظوری دے دی ہے۔مرکیز وزیر انوراگ ٹھاکر نے کابینی فیصلہ جات کے بارے میں میڈیا و بریفنگ دیتے ہوئے کہاکہ سبسڈی پر 22303 کروڑ روپے خرچ ہونے کی امید ہے۔ربیع سیزن کے لیے، سبسڈی والی قیمتیں نائٹروجن، 47.02 روپے فی کلوگرام،فاسفورس – 20.82 روپے فی کلو،پوٹاشیم – 2.38 روپے فی کلواورسلفر – 1.89 روپے فی کلوکے مطابق ہونگی۔انوراگ ٹھاکر نے کہا کہ ڈائی امونیم فاسفیٹ 1350 روپے فی بیگ کے پرانے نرخ پر فروخت ہوتا رہے گا، جبکہ موریٹ آف پوٹاش (ایم او پی) کے لیے یہ شرح کم ہو جائے گی۔کابینہ نے پردھان منتری کرشی سنچائی یوجنا-ایکسلریٹڈ ایریگیشن بینیفٹ پروگرام (PMKSY-AIBP) کے تحت اتراکھنڈ کے جمرانی ڈیم کثیر مقصدی پروجیکٹ کو شامل کرنے کی بھی منظوری دی۔پروجیکٹ کی تخمینہ لاگت 2,584.10 کروڑ روپے ہے جس میں اتراکھنڈ کو 1557.18 کروڑ روپے کی مرکزی امداد بھی شامل ہے۔ یہ منصوبہ مارچ 2028 میں مکمل ہونا ہے۔جون کے شروع میں، کابینہ نے متبادل کھادوں کو فروغ دینے اور کیمیائی کھادوں کے استعمال کو کم کرنے کے لیے ریاستوں کو ترغیب دینے کے لیے PM-PRANAM اسکیم کو منظوری دی تھی۔ اسکیم PM-PRANAM (PM پروگرام برائے بحالی، بیداری، نسل، پرورش اور املیوریشن آف مدر ارتھ) کا اعلان وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے 1 فروری کو 2023-24 کے بجٹ کے حصے کے طور پر کیا تھا۔اسکیم کے تحت، مرکز ریاستوں کو ترغیب دے گا، جو متبادل کھادوں کو فروغ دے گا اور کیمیائی کھادوں کو کم کرے گا.کھاد کے وزیر منسکھ منڈاویہ نے کابینہ کی میٹنگ کے بعد نامہ نگاروں کو بتایاکہ فرض کریں کہ کوئی ریاست 10 لاکھ ٹن روایتی کھاد کا استعمال کر رہی ہے، اور اگر وہ اس کی کھپت کو 3 لاکھ ٹن تک کم کرتی ہے، تو سبسڈی کی بچت 3000 کروڑ روپے ہوگی۔ اس سبسڈی کی بچت میں سے، مرکز اس کا 50 فیصد دے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں