0

ملک میں سڑک حادثات میں 15فیصدی اضافہ ہوا ہے۔ وزارت سڑک و ٹرانسپورٹ کی سالانہ رپورٹ

ایک سال میں 4لاکھ 61ہزار سے زیادہ سڑک حادثات میں ایک لاکھ 86ہزار سے زائد افراد کی موت ہوئی
سرینگر/31اکتوبر/وی او آئی//وزارت سڑک ٹرانسپورٹ نے سڑک حادثات کی سالانہ رپوٹ میں کہا ہے کہ ملک میں کل 4,61,312 سڑک حادثات رپورٹ ہوئے ہیں، جن میں 1,68,491 لوگوں کی جانیں گئیں اور 4,43,366 افراد زخمی ہوئے۔ یہ پچھلے سال کے مقابلے میں حادثات میں 11.9%، ہلاکتوں میں 9.4%، اور زخمیوں میں 15.3% اضافہ کی نشاندہی کرتا ہے۔رپورٹ میں تیز رفتاری، لاپرواہی سے گاڑی چلانا، نشے میں گاڑی چلانا، اور ٹریفک کے ضوابط کی عدم تعمیل سمیت ان حادثات میں معاون عوامل سے نمٹنے کے لیے ایک جامع نقطہ نظر اپنانے کی فوری ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔وائس آف انڈیا کے مطابق سڑک ٹرانسپورٹ اور شاہراہوں کی وزارت کی طرف سے سالانہ رپورٹ ’ہندوستان میں سڑک حادثات-2022‘ شائع کی گئی ہے۔ یہ رپورٹ کیلنڈر سال کی بنیاد پر ریاستوں،مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے پولیس محکموں سے موصول ہونے والے ڈیٹا،معلومات پر مبنی ہے جیسا کہ ایشیا پیسفک روڈ ایکسیڈنٹ ڈیٹا کے تحت اقوام متحدہ کے اقتصادی اور سماجی کمیشن برائے ایشیا اور بحرالکاہل (UNESCAP) نے فراہم کیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق، کیلنڈر سال 2022 کے دوران ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں (UTs) کے ذریعہ کل 4,61,312 سڑک حادثات رپورٹ ہوئے ہیں، جن میں 1,68,491 لوگوں کی جانیں گئیں اور 4,43,366 افراد زخمی ہوئے۔ یہ پچھلے سال کے مقابلے میں حادثات میں 11.9%، ہلاکتوں میں 9.4%، اور زخمیوں میں 15.3% اضافہ کی نشاندہی کرتا ہے۔رپورٹ میں تیز رفتاری، لاپرواہی سے گاڑی چلانا، نشے میں گاڑی چلانا، اور ٹریفک کے ضوابط کی عدم تعمیل سمیت ان حادثات میں معاون عوامل سے نمٹنے کے لیے ایک جامع نقطہ نظر اپنانے کی فوری ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔ یہ بہت اہم ہے کہ ہم نفاذ کے طریقہ کار کو مضبوط کریں، ڈرائیور کی تعلیم اور تربیتی پروگراموں کو بہتر بنائیں، اور سڑکوں اور گاڑیوں کی حالت کو بہتر بنانے میں سرمایہ کاری کریں۔وزارت سڑک حادثات کو روکنے کے لیے مضبوط اقدامات کو نافذ کرنے کے لیے پرعزم ہے۔ وزارت سڑک استعمال کرنے والے کے رویے، سڑک کے بنیادی ڈھانچے، گاڑیوں کے معیارات، ٹریفک کے ضابطوں کا نفاذ، اور حادثات کی روک تھام میں ٹیکنالوجی کے کردار جیسے مختلف پہلوؤں پر بھی کام کر رہی ہے۔ چونکہ سڑک حادثات کی نوعیت کثیر الجہتی ہوتی ہے، اس لیے مرکزی حکومت اور ریاستی حکومتوں دونوں کی تمام ایجنسیوں کی مشترکہ کوششوں کے ذریعے مسائل کو کم کرنے کے لیے کثیر الجہتی نقطہ نظر کی ضرورت ہوتی ہے۔ وزارت نے مختلف دیگر متعلقہ اداروں کے ساتھ ساتھ اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ مل کر سڑک کی حفاظت کے مسئلے سے نمٹنے کے لیے ایک کثیر الجہتی حکمت عملی تیار کی ہے جس میں تعلیم، انجینئرنگ (سڑکیں اور گاڑیاں دونوں)، نفاذ اور ہنگامی دیکھ بھال سمیت تمام 4Es پر توجہ مرکوز کی گئی ہے۔مزید برآں، وزارت نقل و حمل کے جدید نظام کے نفاذ، روڈ سیفٹی آڈٹ، اور عالمی بہترین طریقوں سے سیکھنے کے لیے بین الاقوامی تعاون جیسے اقدامات میں سرگرم عمل ہے۔ سڑک حادثات سے نمٹنے کے لیے ریئل ٹائم ڈیٹا کے تجزیہ کے لیے الیکٹرانک ڈیٹیلڈ ایکسیڈنٹ رپورٹ (e-DAR) اور خودکار گاڑیوں کے معائنہ کے مراکز جیسے اقدامات بھی جاری ہیں۔”روڈ ایکسیڈنٹ ان انڈیا-2022″ کی اشاعت سڑک کی حفاظت کے دائرے میں پالیسی سازوں، محققین اور اسٹیک ہولڈرز کے لیے ایک قیمتی وسیلہ کے طور پر کام کرتی ہے۔ یہ سڑک حادثات کے مختلف پہلوؤں کے بارے میں گہرائی سے بصیرت پیش کرتا ہے، بشمول ان کی وجوہات، مقامات، اور سڑک استعمال کرنے والوں کے مختلف زمروں پر ان کے اثرات۔ رپورٹ میں ابھرتے ہوئے رجحانات، چیلنجز، اور وزارت کے روڈ سیفٹی اقدامات پر بھی روشنی ڈالی گئی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں