0

مودی حکومت نے ہندوستان کے خلائی پروگرام کی کامیابی کے لیے سازگار ماحول بنایا۔ ڈاکٹر جتیندر سنگھ

نئی دلی۔ 20؍ ستمبر۔ این این این۔ سائنس اور ٹکنالوجی کے وزیر ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے بدھ کے روز کانگریس کی سابقہ حکومتوں پر خلائی محکمے کو ”نظر انداز” کرنے اور عام آدمی اور صنعت کو اس سے باز رکھنے کا الزام لگایا، جب کہ اس بات پر زور دیا کہ مودی حکومت نے ملک کے خلا کی کامیابی کے لیے ایک سازگار ماحول بنایا ہے۔ چندریان 3 کی کامیاب سافٹ لینڈنگ کے ذریعے نشان زد ہندوستان کے شاندار خلائی سفر پر بحث میں حصہ لیتے ہوئے، انہوں نے کہا کہ خلائی شعبے میں آج 150 اسٹارٹ اپس ہیں جو کہ 2014 سے پہلے صرف چار تھے جو کہ ’’شرمناک‘‘ تھا۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ پچھلے نو سالوں میں خلائی بجٹ بڑھ کر 142 فیصد ہو گیا ہے۔کانگریس لیڈر جے رام رمیش پر جوابی حملہ کرتے ہوئے، جنہوں نے کہا کہ خلائی میدان میں پچھلی چھ دہائیوں کی کامیابیوں کو نظر انداز کیا گیا، وزیر نے کہا کہ پہلے عام آدمی کو احاطے کے اندر جھانکنے سے بھی روک دیا گیا تھا۔انہیں کیوں دور رکھا گیا؟ آپ نے خلائی محکمہ کو رازداری کے پردے میں رکھا ہوا تھا۔ آپ نے اس کا انتظام کیا تھا۔ آپ نے اسے تمام اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ ہم آہنگ کرنے کی اجازت نہیں دی تھی۔ آپ نے صنعت کو اس میں ملوث ہونے کی اجازت نہیں دی تھی اور اسی وجہ سے ترقی رک گئی۔انہوں نے کہا کہ ہمیں یہاں تک پہنچنے میں 75 سال لگ گئے۔’ ‘2014 سے پہلے، خلا میں چار اسٹارٹ اپ تھے اور یہ کہنا شرمناک ہے۔’’اہم بات یہ ہے کہ جب ہم نے 1960 کی دہائی کے اوائل اور وسط میں اپنا پروگرام شروع کیا تو ایک طرف آپ (وکرم) سارا بھائی ٹرانسپورٹ سے محروم تھے اور دوسری طرف آپ کے پاس سوویت یونین اور امریکہ ایک انسان کو لینڈ کرنے کی تیاری کر رہے تھے۔ چاند کی سطح پر یہ دونوں کے درمیان فرق اور فرق کا فاصلہ تھا۔ پھر بھی نوجوان سائنسدانوں کے اس گروپ میں اتنی ہمت تھی۔انہوں نے چندریان 3 کے پروجیکٹ ڈائریکٹر ویرموتھویل کا بھی ذکر کیا، جو گیلری میں بیٹھے تھے، ایوان نے ڈیسک بجا کر ان کی تعریف کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں