0

وائلوں ٹنگمرگ میں دہشت گرد حملے ہیڈ کانسٹیبل کے قتل کا معاملہ مہلوک 7بیٹوں کا والد تھا

سری نگر01نومبر,کے این ایس :شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ کے وائلوں ٹنگمرگ میں مشتبہ دہشت گردوں کے ہاتھوں ایک جموں و کشمیر پولیس کے ایک ہیڈ کانسٹیبل غلام محمد ڈار کو گولی مار کرہلاک کرنے کی واردات کے بعد پورے علاقے میں خوف و دہشت کا ماحول پھیل گیا ہے جبکہ یہاں پوری بستی سوگوار ہے کشمیر نیوز سروس کو مقامی لوگوں نے بتایا کہ مرحوم ایک انتہائی نیک اور شریف النفس شخصیت کے مالک تھی۔مرحوم وفات پر پوار علاقہ سوگوار ہے اور انہیں ہر گوئی پر نم آنکھوں سے یاد کر رہا تھا۔مرحوم پویس اہلکار کے چھوٹے بھائی نے بتایا کہ منگل کی شام ساڑے چھیپونے سات کے قریب ہم گھر میں تھے باہر گولی چلنے کی آواز سنائی اور لوگ بھی ایک دوسرے سے پوچھ رہے تھے کہ فائر جیسی آواز سنائی دی ہے۔انہوں نے بتایا جب ہم یہاں جائے واردات کی جانب پوہنچ گئے تو ہم نے یہاں پربڑے بھائی کو خون میں لت پت دیکھا ہیاور انہیں کافی خون بھی ضائح ہوا تھاتاہم اس سب کے باوجود ہم نے انہیں ٹنگمرگ لے گئے تاہم انہوں نے راستے میں زخموں کی تاب نہ لا کر دم توڑ دیا ہے۔مرحوم کے بھائی نے بتایا کسی سے بھی اس کے بارے میں پوچھ سکتے ہیں کہ وہ کس قسم کا انسان تھا ان کا مزید کہنا تھا کہ مرحوم5سال پلوامہ میں تعینات رہے کبھی بھی کسی قسم کی کوئی پریشانی نہیں ہوئی ”ہمیں پتہ تھا کہ وہ انسان دوست پولیس اہلکار تھے۔قریبی رشتہ داروں سے معلوم ہوا ہے کہ مرحوم کی 7بیٹیاں ہیں ان میں سے ایک کی شادی ہونے والی ہے اور شادی کے سلسلے،میں یہاں مکان کا کام چل رہا ہے اسی سلسلے میں یہ تیاریوں اور مکان کی کام کے بارے میں جائزہ لینے آیا تھا جس دوران گھر کے قریب پہنچنے کے ساتھ ہی بندوق بردار نے ان پر گولی مار کر انہیں قتل کیا اور ساتھ بیٹیوں کو والد سائے سے ہمیشہ کے لئے محروم کردیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں