0

پاکستان کے ساتھ لگنے والی سرحد پر تناوی صورتحال تشویشناک: ڈاکٹر فاروق عبداللہ

سری نگر،27اکتوبر(یو این آئی)جموں وکشمیر نیشنل کانفرنس نے جموں کے ارنیہ اور آر ایس پورہ سیکٹر میں تناﺅ کے تازہ واقعات پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ہند پاک فوجی حکام پر زور دیا ہے کہ صورتحال مزید ابتر ہونے سے قبل فوری طور پر فلیگ میٹنگ طلب کرکے معاملات کو سلجھائیں۔
ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ فروری2021میں دونوں ملکوں کے درمیان جنگ بندی معاہدے کے بعد سرحدوں پر صورتحال پُرامن رہی اور اس دوران سالہاسال سے بے گھر ہوئے لوگ اپنے گھروں کو واپس لوٹ گئے اور اپنے کھیت کھلیانوں میں ماضی کی طرح کام کرنے لگے اور مال مویشیوں کیساتھ بودباش کررہے تھے ۔
سرحدی علاقوں میں بچے باقاعدگی کے ساتھ تعلیمی مراکز پر جاتے تھے لیکن گذشتہ روز کی جنگ بندی خلاف ورزی کی وجہ سے سرحدی آبادی زبردست خوف و ہراس اور تشویش میں مبتلا ہوگئی ہے اور ماضی کی جنگ بندی خلاف ورزیوں کی ڈراونی یادیں تازہ ہوگئیں ہیں ۔
انہوں نے کہا کہ ماضی میں سرحدی کشیدگی سے نہ صرف دونوں ممالک کے فوجی مارے گئے بلکہ عام لوگوں بھی گھن گرج کا نشانہ بنتے رہے ہیںاور اس صورتحال میں سرحدکے قریب رہائش پذیر لوگوں کو ریکارڈ توڑ تکالیف اور مشکلات کا سامنا کرنا پڑ ہے۔
انہوں نے کہا کہ آر پار فائرنگ اور گولہ باری سے سرحدوں کے نزدیک رہنے والے لوگوں کو ہر وقت اپنے سروں پر موت کا سایہ منڈلاتا نظر آرہاہے اور ایسے میں اُن کی زندگیاں پھر ایک بار عذاب بن جانے کا اندیشہ ہے۔
ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے ہندوستان اور پاکستان کی سیاسی اور فوجی قیادت کو تدبر اور صبر و تحمل کا مظاہرہ کرکے مذاکراتی میز پر آنے کی اپیل کی اور ساتھ ہی جنگ بندی معاہدے پر مکمل عمل کرنے کی تاکید کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں