0

چین نے حقیقی کنٹرول لائن کے نزدیک اپنے بنیادی ڈھانچے کی تعمیر میں اضافہ کر دیا ہے

ہندوستان اور چین کے درمیان مذاکرات میں کم سے کم پیش رفت ہوئی ;223; پینٹاگون کی سیکورٹی رپورٹ میں انکشاف

سرینگر;22اکتوبر;ایس این این ;بھارت اور چین کے مابین مشرقی لداخ میں حقیقی کنٹرول لائن پر جاری کشیدگی کے بیچ پینٹاگون کی سیکورٹی رپورٹ نے انکشاف کیا ہے کہ چین نے حقیقی کنٹرول لائن کے نزدیک اپنے بنیادی ڈھانچے کی تعمیر میں اضافہ کر دیا ہے ۔ ایس این این مانیٹرنگ ڈیسک کے مطابق چین نے بھارت کے ساتھ سرحدی کشیدگی کے درمیان لائن آف ایکچوئل کنٹرول کے ساتھ اپنی فوجی موجودگی اور بنیادی ڈھانچے کی تعمیر میں اضافہ کیا ہے ۔ پینٹاگون کی عوامی جمہوریہ چین میں شامل فوجی اور سیکورٹی ترقیات رپورٹ 2023 میں اس بات کا انکشاف ہو گیا ہے کہ زیر زمین ذخیرہ کرنے کی سہولیات، نئی سڑکیں ، دوہری مقصد کا ہوائی اڈہ اور متعدد ہیلی پیڈز ایل اے سی کے ساتھ ساتھ بیجنگ کے بنیادی ڈھانچے کا حصہ ہیں ۔ رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ چین کی ویسٹرن تھیٹر کمانڈ نے وادی گالوان کے جھڑپ کے جواب میں ایل اے سی کے ساتھ بڑے پیمانے پر متحرک اور تعیناتی کو نافذ کیا جس میں 20 ہندوستانی فوجیوں کی جانیں گئیں ۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ تعیناتیاں اس سال تک جاری رہیں گی ۔ رپورٹ میں اس بات کی نشاندہی کی گئی ہے کہ ہندوستان اور چین کے درمیان مذاکرات میں کم سے کم پیش رفت ہوئی ہے کیونکہ دونوں اطراف نے سرحد پر سمجھے جانے والے فوائد کو کھونے کی مزاحمت کی ۔ ایل اے سی کے ساتھ بیجنگ کے بنیادی ڈھانچے کی تعمیر کو درج کرتے ہوئے رپورٹ میں کہا گیا ہے سال 2022 میں چین نے ایل اے سی کے ساتھ ملٹری انفراسٹرکچر کو ترقی دینا جاری رکھا ۔ ان بہتریوں میں ڈوکلام کے قریب زیر زمین اسٹوریج کی سہولیات، ایل اے سی کے تینوں سیکٹرز میں نئی سڑکیں ، متنازعہ گاءوں شامل ہیں ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں