0

ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے آثار شریف درگاہِ حضرتبل میں نمازِ جمعہ ادا کی

عالم اسلام کی فتح و نصرت اور جموں وکشمیر کے عوام کی خوشحالی و فارغ البالی کیلئے دعا کی

سرینگر;13اکتوبر;ایس این این;مسلم ممالک ٹولیوں میں بٹے رہنے سے بھی فلسطین کا مسئلہ ہر گزرتے دن کیساتھ پیچیدہ ہوتا گیا کی بات کرتے ہوئے ، اگر اُمت مسلمہ نے صدرِ نیشنل کانفرنس ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ اقوام عالم سالہاسال سے فلسطینیوں کی نسلی کشی کی تماشائی نہ بنی ہوتی تو آج اس جنگ کی نوبت نہ آن پڑتی ۔ سٹار نیوز نیٹ ورک کے مطابق ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے آثار شریف درگاہِ حضرتبل میں نمازِ جمعہ ادا کی ۔ انہوں نے اس موقعے پر جموں وکشمیر کے عوام کی فتح نصرت، خوشحالی اور فارغ البالی کے علاوہ اُمت مسلم کو درپیش چیلنجوں سے نجات کیلئے خصوصی دعا کی ۔ دریں اثناء انہوں نے فلسطین میں جاری خون خرابے پر زبردست تشویش کا اظہار کرتے ہوئے معصوم شہریوں کی ہلاکت پر گہرے صدمے کا اظہار کیا ۔ انہوں نے کہا کہ اقوام عالم سالہاسال سے فلسطینیوں کی نسلی کشی کی تماشائی نہ بنی ہوتی تو آج اس جنگ کی نوبت نہ آن پڑتی ۔ ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہاکہ مسلم ممالک ٹولیوں میں بٹے رہنے سے بھی فلسطین کا مسئلہ ہر گزرتے دن کیساتھ پیچیدہ ہوتا گیا ، اگر اُمت مسلمہ نے پہلے ہی اتحاد و اتفاق کا مظاہرہ کیا تو آج فلسطین یہ حالت ہوتی اور نہ ہی مسلمانانِ عالم کو موجودہ چیلنجوں کا سامنا ہوتا ۔ انہوں نے کہا کہ اہل کشمیر کی ہمیشہ فلسطینی عوام کے ساتھ وائلانہ عقیدت رہی ہے اور ان کی آزادی کی حمایت کرتے آئے ہیں ۔ انہوں نے مسلم ممالکوں سے اپیل کی کہ وہ مسلم اتحاد قائم دائم رکھنے کی ہر ممکن کوشش کو یقینی بنائیں تاکہ متحد ہو کر مسلم دشمن عناصروں اور صیہونی طاقتوں کے مذموم ارادے ناکام ہوسکیں ۔ ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ اللہ ہی ہمارا واحد مددگا ر ہے اور وہی فلسطین اور ہ میں موجودہ مشکلات اور تباہ کن حالات سے نجات دلا سکتا ہے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں