0

کشمیری لکچرار انکوائری کمیٹی کے سامنے پیش

سرینگر (جموں و کشمیر):کشمیر سے تعلق رکھنے والے ایک لیکچرار ظہور احمد بٹ، جنہیں 23 اگست کو سپریم کورٹ میں دفعہ 370 کی منسوخی کے معاملے میں درخواست گزاروں کے حق میں دلائل پیش کرنے کے بعد معطل کر دیا گیا تھا، جموں و کشمیر لیفٹیننٹ گورنر انتظامیہ کی جانب سے تشکیل دی گئی کمیٹی کے سامنے پیش ہوئے۔

پولیٹیکل سائنس کے ایک سینئر لیکچرار ظہور بٹ نے ای ٹی وی بھارت کو فون پر بتایا کہ ’’میں جمعرات کو ایک انکوائری کے ایک حصے کے طور پر جموں کے اسکول ایجوکیشن کے جوائنٹ ڈائریکٹر سباح مہتا کے سامنے پیش ہوا اور کمیٹی کو اپنی چھٹی کی درخواست، اسٹیشن کی اجازت اور دیگر متعلقہ دستاویزات فراہم کیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ 22 اور 23 اگست کو نئی دہلی جانے کے لیے انہوں نے دو دن کی چھٹی کے لیے درخواست بھی جمع کرائی تھی۔دلچسپ امر ہے کہ بٹ کو اسکول ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ نے گزشتہ ہفتے معطل کر دیا تھا۔ بٹ کو ایس ای ڈی کے ایک حکم نامے کے مطابق: ’’جموں و کشمیر سیول سروسز ریگولیشنز، جموں و کشمیر گورنمنٹ ایمپلائز کنڈکٹ رولز اور جموں و کشمیر چھٹی کے قواعد کی دفعات کی خلاف ورزی کرنے پر، فوری طور پر معطل‘‘ کر دیا گیا تھا۔

سرینگر کے ایک سرکاری اسکول میں پولیٹیکل سائنس کے سینئر لیکچرر کی معطلی کا معاملہ سینئر وکیل کپل سبل نے 28 اگست کو چیف جسٹس آف انڈیا ڈی وائی چندرچور کی سربراہی میں پانچ ججوں کی آئینی بنچ کے سامنے اٹھایا تھا۔ اس کے نتیجے میں سپریم کورٹ نے کہا کہ ’’بھارت کے اٹارنی جنرل معاملے کی تحقیقات کریں۔‘‘

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں