0

ہندی نے نہ کبھی کسی دوسری ہندوستانی زبان کا مقابلہ کیا اور نہ ہی کرے گی۔ امیت شاہ

نئی دلی۔ 14؍ ستمبر۔ ایم این این۔ ہندی دیوس کے موقع پر، مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے جمعرات کو تمام ہندوستانی زبانوں اور بولیوں کو اس امید کے ساتھ مضبوط کرنے کی ضرورت پر زور دیا کہ ہندی سب کو بااختیار بنانے کا ذریعہ بن جائے گی۔ ہندی دیوس کے موقع پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے وزیر موصوف نے کہا کہ ’’ہندی نے نہ تو کبھی کسی دوسری ہندوستانی زبان کا مقابلہ کیا ہے اور نہ ہی مقابلہ کرے گی اور یہ کہ کسی بھی ملک کا اصلی اور تخلیقی اظہار صرف اس کی اپنی زبان سے ہی ممکن ہے جو ہمارے پاس ہے۔ہندی دیوس کے موقع پر ہم وطنوں کو اپنی نیک خواہشات کا اظہار کرتے ہوئے شاہ نے کہا کہ ہندی دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت میں زبانوں کے تنوع کو یکجا کرتی ہے۔ “ہندی ایک جمہوری زبان رہی ہے۔ اس نے مختلف ہندوستانی زبانوں اور بولیوں کے ساتھ ساتھ بہت سی عالمی زبانوں کو بھی عزت دی ہے اور ان کے الفاظ، جملوں اور گرامر کے قواعد کو اپنایا ہے۔ اس نے تحریک آزادی کے مشکل دنوں میں ملک کو متحد کرنے میں بھی بے مثال کردار ادا کیا ہے۔ اس نے کئی زبانوں اور بولیوں میں بٹے ہوئے ملک میں اتحاد کا احساس پیدا کیا۔ ہندی، رابطے کی زبان کے طور پر، ملک میں آزادی کی جدوجہد کو مشرق سے مغرب اور شمال سے جنوب تک آگے لے جانے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔تحریک آزادی اور آزادی کے بعد ہندی کے اہم کردار پر غور کرتے ہوئے شاہ نے کہا کہ آئین کے معماروں نے 14 ستمبر 1949 کو ہندی کو سرکاری زبان کے طور پر قبول کیا تھا۔انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ہماری زبان کی ترقی ہمہ گیر ترقی کی بنیاد ہے اور ہماری تمام ہندوستانی زبانیں اور بولیاں ہماری ثقافتی ورثہ ہیں، جنہیں ہمیں اپنے ساتھ لے کر چلنا ہے۔ شاہ نے مزید کہا کہ “ہندی نے نہ تو کبھی مقابلہ کیا ہے اور نہ ہی کسی دوسری ہندوستانی زبان سے مقابلہ کرے گی۔انہوں نے کہا کہ اپنی تمام زبانوں کو مضبوط کرنے سے ہی ایک مضبوط قوم بن سکے گی۔ وزیر داخلہ نے اس یقین کا اظہار کیا کہ ہندی تمام مقامی زبانوں کو بااختیار بنانے کا ذریعہ بنے گی۔وزیر داخلہ نے کہا کہ پارلیمانی کمیٹی برائے دفتری زبان تشکیل دی گئی تھی جو وقتاً فوقتاً ملک میں سرکاری زبان میں ہونے والے کام کا جائزہ لے گی۔ اسے یہ ذمہ داری دی گئی کہ وہ ملک بھر میں سرکاری کاموں میں ہندی کے استعمال میں ہونے والی پیش رفت کا جائزہ لے اور اس کی رپورٹ تیار کرکے صدر جمہوریہ کو پیش کرے۔ شاہ نے مزید کہا کہ انہیں یہ بتاتے ہوئے خوشی ہو رہی ہے کہ اس رپورٹ کی 12ویں جلد صدر کو پیش کر دی گئی ہے۔ 2014 تک رپورٹ کی صرف 9 جلدیں پیش کی گئی تھیں، لیکن ہم نے گزشتہ 4 سالوں میں صرف 3 جلدیں پیش کیں۔ 2019 سے تمام 59 وزارتوں میں ہندی ایڈوائزری کمیٹیاں بنائی گئی ہیں اور ان کی میٹنگیں بھی باقاعدگی سے منعقد کی جا رہی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں