0

990 کے قریب سرکاری ملازمین کے پا س ابتدائی تقرریوں کے احکامات دستیاب نہیں

جموں وکشمیر انتظامی کونسل نے معاملہ ہائی پاور کمیٹی کو سونپ دیا
سرینگر/یکم نومبر/اے پی آئی چور دروازے سے ملازمتیں اور سیاسی اثر رسوخ کی بناء پرملازمتیں فراہم کرنے کے معاملے نے اس وقت نیاموڑلے لیا جب جموں و کشمیر سرکار نے اس بات کاانکشاف کیاکہ 990کے قریب سرکاری ملازمین کی ابتدائی تقریب کے احکامات کہی بھی دستیاب نہیں ہے۔اے پی آئی نیوز کے مطابق جموں و کشمیرمیں دو لاکھ پچاس ہزار کے قریب سرکاری ملازمین کوچور دروازے سے نوکریاں فراہم کرنے کے جموں و کشمیرکے چیف سیکریٹری ڈاکٹرارون کمار مہتاکے اعلان نے اس وقت نیاموڑ لے لیاجب اس بات کاانکشاف ہوا کہ چھان بین کے بعد 990سرکاری ملازمین کے پاس ابتدائی تقرریوں کے احکامات نہ ان کے پاس موجود ہے اور نہ ہی ان کے محکموں میں موجود ہے۔ جن 990ملازمین کے تقریوں کے احکامات دستیاب نہیں ہے ان کے ساتھ معاملات کو کیسے نپٹایاجائیگا۔سرکار نے یہ معاملہ ہائی پاور کمیٹی کوسونپ دیاہے جموں و کشمیرکے سرکاری اداروں میں غیرقانونی طریقے سے سرکاری ملازمین فراہم کرنے کے بیانات پچھلے دو برسوں سے مسلسل سامنے آ ئے ہیں اور چیف سیکریٹری نے سرحدی ضلع کپوارہ میں تقریب کے د وران اس بات کاانکشاف کیاتھاکہ دولاکھ پچاس ہزارکے قریب سرکاری ملازمین کوچور دروازے سے نوکریاں فراہم کی گئی ہیں۔ چیف سیکریٹری کے اس بیان کے بعد جموں و کشمیر میں موجود سیاسی پارٹیوں کے لیڈروں نے اپناسخت رد عمل ظاہر کرتے ہوئے مطالبہ کیاتھاکہ سرکار کو اس سلسلے میں لسٹ منظر عام پرلانی چاہئے کہ کن ملازمین کوچور دروازے سے سرکاری نوکریاں فراہم کی گئی ہے۔سیاسی پارٹیوں کے لیڈروں کے بیان کے بعد اب انتظامی کونسل نے 990ملازمین کی لسٹ سامنے لائی ہے او رانتظامی کونسل کاکہناہے کہ ان ملازمین کے پاس سرکاری ملازمت حاصل کرنے کے احکامات موجود نہیں اور نہ ہی سرکاری دفتروں میں کوئی ثبوت ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں